The COVID-19 Virus May Have Been in Humans For Years, Study Suggests




The COVID-19 Virus May Have Been in Humans For Years, Study Suggests
As COVID-19 has bummed a ride the world over, causing lockdowns, pneumonia and dread, researchers have been hustling to figure out where the SARS-CoV-2 coronavirus has originated from.

While we don't have all the appropriate responses yet - including whether it originated from a creature store - another examination has authoritatively settled the connivances that guarantee it's a lab-made infection.

The examination raises some fascinating prospects with respect to the starting point of the new coronavirus. One of the situations proposes the infection may have been flowing innocuously in human populaces for a long time before it turned into the pandemic that is presently left the world speechless.

"It is conceivable that an ancestor of SARS-CoV-2 hopped into people, gaining [new genomic features] through adjustment during undetected human-to-human transmission," the group from the US, UK and Australia writes in the investigation.

"When gained, these adjustments would empower the pandemic to take off and produce an adequately enormous group of cases."

The analysts dissected genomic information accessible from SARS-CoV-2 and other comparable coronaviruses, demonstrating that the receptor-restricting space (RBD) segments of SARS-CoV-2 spike proteins were so compelling at official to human cells, they must be brought about by regular choice.

"By contrasting the accessible genome succession information for known coronavirus strains, we can immovably confirm that SARS-CoV-2 started through characteristic procedures," said one of the analysts, immunologist Kristian Andersen at Scripps Research.

"Two highlights of the infection, the transformations in the RBD segment of the spike protein and its particular spine, precludes research facility control as a potential beginning for SARS-CoV-2."

With 'research center examination turned out badly' off the beaten path, the group investigated two practical theories. To start with, that the common choice happened in a creature have before the infection was transmitted to people. The group clarifies that in spite of the fact that examples of coronaviruses in bats and pangolins have indicated comparable genomes, none of them fit consummately at this time.

"Albeit no creature coronavirus has been recognized that is adequately like have filled in as the immediate ancestor of SARS-CoV-2, the decent variety of coronaviruses in bats and different species is greatly undersampled," the analysts compose.

The subsequent speculation is that the common determination occurred in people - after the infection was transmitted from a creature have.

"The subsequent situation is that the new coronavirus crossed from creatures into people before it got fit for causing human infection," chief of the National Institute of Health, Francis Collins clarifies on the NIH blog.

"At that point, because of steady transformative changes over years or maybe decades, the infection in the long run picked up the capacity to spread from human-to-human and cause genuine, regularly hazardous ailment."

In spite of the fact that we don't yet know which of the two theories is right, the scientists imagine that more proof may tip the scales for either - yet we'll need to trust that that exploration will be finished.

Meanwhile, wash your hands, remain at home, and help with the exertion in the event that you can.

The correspondence has been distributed in Nature Medicine
The COVID-19 Virus May Have Been in Humans For Years, Study Suggests The COVID-19 Virus May Have Been in Humans For Years, Study Suggests Reviewed by SaQLaiN HaShMi on 6:05 AM Rating: 5

What Is a Coronavirus?



What Is a Coronavirus?
Coronaviruses are a group of infections known for containing strains that cause conceivably savage ailments in warm blooded animals and winged creatures. In people they're normally spread through airborne beads of liquid created by contaminated people.

Some uncommon yet outstanding strains, including SARS-CoV-2 (liable for COVID-19), and those liable for serious intense respiratory disorder (SARS) and Middle East respiratory disorder (MERS), can cause demise in people.

First depicted in detail during the 1960s, the coronavirus gets its name from a particular crown or 'crown' of sugary-proteins that ventures from the envelope encompassing the molecule. Encoding the infection's make-up is the longest genome of any RNA-based infection – a solitary strand of nucleic corrosive around 26,000 to 32,000 bases in length.

There are four known varieties in the family, named Alphacoronavirus, Betacoronavirus, Gammacoronavirus, and Deltacoronavirus. The initial two just contaminate well evolved creatures, including bats, pigs, felines, and people. Gammacoronavirus for the most part taints feathered creatures, for example, poultry, while Deltacoronavirus can contaminate the two winged animals and warm blooded creatures.


What are the indications of a coronavirus?
Coronaviruses can offer ascent to an assortment of indications in various creatures. While a few strains cause looseness of the bowels in pigs and in turkeys, more often than not diseases can be contrasted with an awful chilly, making mellow moderate upper respiratory issues, for example, a runny nose and sore throat.

There are a bunch of deadly special cases, which have devastatingly affected animals and human wellbeing around the world.

COVID-19 (SARS-CoV-2)
SARS-CoV-2 was first distinguished in the Chinese city of Wuhan in 2019. At the hour of composing, quantities of contaminated are still on the ascent, with a death pace of around 1 percent.

Snakes were initially suspected as a potential hotspot for the episode, however different specialists have considered this impossible and proposed bats. As of February 2020, the quest for the creature root of COVID-19 is continuous.


Serious intense respiratory disorder (SARS-CoV)
SARS was first perceived as a particular strain of coronavirus in 2003. The wellspring of the infection has never been clear, however the main human contaminations can be followed back to the Chinese area of Guangdong in 2002.

The infection at that point turned into a pandemic, causing in excess of 8,000 contaminations of a flu like ailment in 26 nations with near 800 passings.


Center East respiratory disorder (MERS-CoV)
MERS was first recognized in Saudi Arabia in 2012 in individuals showing side effects of fever, hack, brevity of breath and at times gastrointestinal issues, for example, the runs. A creature hotspot for the infection has never been formally affirmed, however proof focuses to dromedary camels as a potential store of disease.

The World Health Organization has distinguished around 2,500 instances of contamination in 27 nations since starting flare-ups, bringing about almost 860 passings.
What Is a Coronavirus? What Is a Coronavirus? Reviewed by SaQLaiN HaShMi on 5:43 AM Rating: 5

کرونا ہے یا عام بیماری، گھر بیٹھے معلوم کرنے کا طریقہ 👇


کرونا ہے یا عام بیماری، گھر بیٹھے معلوم کرنے کا طریقہ:👇*
ڈاکٹروں کی جدید تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ کرونا کے 70 فیصد متاثرین کی چکھنے اور سونگھنے کی حس ختم ہوجاتی ہے. اور جب یہ صحتیاب ہوجاتے ہیں تو ان کی حس بھی بحال ہوجاتی ہے.
ڈاکٹرز اس علامت کو خدائی نعمت قرار دے رہے ہیں.
آسان الفاط میں سمجھ لیں کہ اگر آپ کو کھٹی میٹھی یا کڑوی اشیاء(جیسے نمک، مرچ یا کسی کڑوی گولی) کے زائقے کا پتا نہیں چل رہا یا عطر /سینٹ کی خوشبو محسوس نہیں ہورہی تو یہ اس بات کا ثبوت ہے کہ آپ کرونا سے متاثر ہوچکے ہیں.... چاہے آپ میں ظاہری علامات نہ بھی ہوں، فورا خود کو گھر کے تمام افراد سے الگ کرکے قریبی قرنطنیہ سینئر پہنچ جائیں تاکہ بروقت علاج سے آپکی جان بچائی جاسکے.
اور اگر آپ میں کرونا کی تمام علامات موجود ہوں(جیسے بخار ہو، نزلہ زکام، سر درد) بھی ہو لیکن اسکے باوجود بھی آپ کی چکھنے اور سونگھنے کی حس(صلاحیت)بلکل ٹھیک کام رہی ہے پھر مبارک ہو آپکو کرونا وائرس نہیں بلکہ موسمی بیماری ہے.
ڈاکٹروں کے مطابق یہ خدا کی طرف سے کرونا متاثرین کو تلاش کرنے کی ایک نعمت ہے........ہمیں اس سے فائدہ اٹھانا چاہیے.
برائے مہربانی آج سے کرونا سے خوفزدہ ہونا چھوڑ دیں،
معمولی نزلہ زکام یا بخاد کی صورت میں خود کو کرونا مریض نہ سمجھیں.
اگر پھر بھی شک ہو تو سب سے پہلے اپنے گھر میں ہی اپنی سونگھنے اور چکھنے کی حس کو چیک کریں، گھر میں نمک، مرچ، یا کوئی کڑوی گولی منہ میں رکھ کر دیکھیں کہ زائقہ محسوس ہورہا ہے یا نہیں، اور سینٹ یا عطر یا کسی اور خوشبو کو سونگھ کر دیکھیں کہ محسوس ہورہا ہے یا نہیں. اگر سب صحیح ہےتو پھر پریشان مت نہ ہوں، نہ ہی گھر سے نکلیں، گھر میں ہی پیناڈول سے اپنا بخار اتار سکتے ہیں، نزلہ زکام ہو تو اسے چھوڑ دیں یہ خود ہی ٹھیک ہوجائے گا.
*پھر بھی پریشانی ہو تو حکومت کی ہیلپ لائن 1166 پر کال کرکے اپنے حالات سے آگاہ کردیں، وہ آپ کو تسلی دیکر سب سمجھادیں گے.*
*قرنطینہ سینئرز میں بھی مریض کو پہلے کڑوی گولی کھلاکر چیک کیا جارہا ہے کہ زائقہ محسوس ہورہا ہے یا نہیں، ڈاکٹرز کے مطابق بہت سے مریض عام بخار کی وجہ سے خود کو کرونا متاثر سمجھ کر قرنطینہ آگئے تھے جنہیں خیریت سے یہ کہہ کر واپس بھیج دیا گیا کہ مبارک ہو آپ کو کرونا نہیں ہے.*
لیکن خدا کے لیے کرونا سے خوفزدہ ہوکر اپنی جان مت لیں، خودکشی مت کریں، یاد رکھیں زندگی و موت اللہ کے اختیار میں ہے نہ کہ کرونا کے. اس لیے ڈرنا چھوڑ دیں اور اوپر بتائی گئی ہدایات کے مطابق خود کو چیک کرتے رہیں. ہوسکے تو پورے گھر کو چکھنے اور سونگھنے کے تجربے سے گزار کر تسلی کریں کہ سب خیریت سے ہیں یا نہیں. یاد رکھیں اس وقت کرونا کا واحد علاج صرف احتیاط ہے لہذہ خود بھی احتیاط کریں اور گھر والوں کو بھی چیک کرتے رہیں کیونکہ گھر میں ایک فرد بھی کرونا متاثر ہوگا تو اس سے پورا گھر متاثر ہونے کے قوی امکانات ہوتے ہیں.
*احتیاط احتیاط اور صرف احتیاط کریں*
*گھر سے ہرگز مت نکلیں*
*صبح و شام سب کی چکھنے اور سونگھنے کی حس کو چیک کرتے رہیں.*
آخر میں یاد رکھیں کرونا اللہ سے بڑا نہیں ہے. اللہ کے حکم کے بغیر نہیں لگ سکتا اور جسے متاثر کرنے کا اللہ فیصلہ فرماچکا ہے اسے دنیا کی کوئی طاقت کرونا سے نہیں بچاسکتی لہذہ اللہ پر توکل رکھیں اور پرامن زندگی گزارتے رہیں. شکریہ
*نوٹ : چکھنے/سونگھنے کی ٹیکنک قرنطینہ میں ڈیوٹی کرنے والے ایک سینیئر ڈاکٹر نے بتائی ہے.*
کرونا ہے یا عام بیماری، گھر بیٹھے معلوم کرنے کا طریقہ 👇 کرونا ہے یا عام بیماری، گھر بیٹھے معلوم کرنے کا طریقہ 👇 Reviewed by SaQLaiN HaShMi on 9:55 AM Rating: 5

وہ چند سبق جو ہم نے پچھلے دنوں سیکھے


وہ چند سبق جو ہم نے پچھلے دنوں سیکھے:
1-زیادہ تر لوگ آسانی کے ساتھ گھر بیٹھ کر کام کر سکتے ہیں.
2-ہم اور ہمارے بچے فاسٹ فوڈ کھائے بنا زندہ رہ سکتے ہیں.
3-معمولی جرم کرنے والوں کو قید سے آزاد کرنا بہتر ہے.
4-ہم محض دنوں میں ہسپتال بنا سکتے ہیں.
5-ہم غریبوں پر کروڑوں روپے خرچ کر سکتے ہیں اور اس کے لیے ہمیں کوئی فیتہ کاٹنے یا تقریب کرنے کی بھی ضرورت نہیں.
6-ہم اپنی چھٹیاں یورپ یا امریکہ جائے بغیر بھی گزار سکتے ہیں.
7-ترقی یافتہ قومیں بھی اسی طرح کمزور ہیں جس طرح کے غریب اقوم، بلکہ اس سے بھی کہیں زیادہ کمزور ہیں
8-ہمارا خاندانی نظام اب بھی صحیح سلامت ہے.
9-اگر ہم سمجھ داری سے استعمال کریں تو ہمارے پاس پیسہ بہت ہے.
10-ہم غیر ضروری طور پر پیٹرول کی بڑی مقدار استعمال کرتے ہیں اس کا براہ راست برا اثر ہماری اکانومی پر پڑتا ہے.
11-امیروں کے بچے غریب بچوں سے کہیں زیادہ کمزور ہیں.
12-دولت مند لوگ طاقت ور نہیں بلکہ کھوکھلے ہیں.
13-ہر نئے فیشن ڈیزائنر کی لان خریدنا ضروری نہیں.
14-بیوی کسی بیوٹی پارلر کا ہفتہ وار چکر لگائے بنا بھی اپنے شوہر کے ساتھ رہ سکتی ہے.
15-بزرگ کسی بھی خاندان کے لیے ریڑہ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں.
16-میڈیا محض وقت کا زیاں ہے۔
17-سکولوں نے غیر ضروری اور بیکار چیزوں کے لیے ہمارے بچوں پر خواہ مخواہ بوجھ ڈالا ہوا ہے.
وہ چند سبق جو ہم نے پچھلے دنوں سیکھے وہ چند سبق جو ہم نے پچھلے دنوں سیکھے Reviewed by SaQLaiN HaShMi on 9:50 AM Rating: 5

*ضروری اعلان*


*ضروری اعلان*

کل سے 29۔03۔2020 ، کسی بھی چیز کے لئے حتی کہ  
 روٹی کے لئے بھی گھر نہ چھوڑیں ، کیوں کہ کورونا وائرس
کے بدترین دور کی شروعات ہو چکی ہے ، کورونا وائرس کی انکیوبیشن کی تاریخ جو کہ 14 دن ہے پوری ہوچکی ہے جس کی وجہ سے بہت سارے مثبت کیس نکلنا شروع ہوجائیں گے اور بہت سے لوگوں کا اس سے متاثر ہونے کا امکان ہو گا اگر آپ نے احتیاط نہ کی اور میل جول جاری رکھا تو آپ وائرس کو خود گھر لے کر آئیں گے جس سے آپ کا پورا خاندان متاثر ہونے کا امکان ہے ۔ ، لہذا یہ انتہائی ضروری ہے کہ گھر میں رہیں ہے اور بہت محتاط رہیں۔ یہ انتہائی ضروری ہے کہ 23 مارچ سے 3 اپریل تک ہم خود اپنا خیال رکھیں کیونکہ وائرس نمودار ہو نے کی آخری حد دو ہفتوں کی ہے جو کہ پوری ہو چکی ہے۔ عام طور پر ان دو ہفتوں میں تمام انفیکشن والے مریض میں علامات ظاہر ہوجاتی ہیں اور ان کا علاج ممکن ہے ۔ پھر اگلے دو ہفتوں کے لئے بھی سکون سے رہنا ہوگا اور ان دو ہفتوں میں یہ پھیلنا بھی رک جائے گا ۔ * اٹلی میں کیا ہوا؟ یہ کہ انھوں نے وائرس کا چوٹی کا سیزن نظرانداز کیا تھا اور اسی وجہ سے تمام کیس ایک ساتھ نکلے تھے جن کا ایک ہی وقت میں علاج کرنا ناممکن ہو گیا تھا جس کی وجہ سے شرح اموات میں اضافہ ہو گیا ۔ * آپ سب سے درخواست ہے کہ کسی سے بھی نہیں ملیں ، یہاں تک کہ ایک ہی خاندان کے لوگ بے شک سامنے گھر میں ہی کیوں نہ رہتے ہوں ان سے بھی نہ ملیں ۔ نہ ہی گھر بلائیں۔ یہ ھم سب کی بھلائی کے لئے ہے۔ * ہم انفیکشن کے میکسم اسٹیج میں جا چکے ہیں ۔ جس سے بچنا انتہائی ضروری ہے ۔ کیونکہ اگر یہ وقت گزر گیا تو آگے انشاءاللہ جلد ہی وائرس پھیلنا رک جائے گا ۔ اور جن مریضوں میں کو رونا وائرس مثبت آیا ہے ان کا علاج ہو جائے گا ۔
*احتیاط علاج سے بہتر ہے*۔
۔
زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچائیں تاکہ اس سے متاثر ہونے کا امکان کم ہوجائے ۔
*ضروری اعلان* *ضروری اعلان* Reviewed by SaQLaiN HaShMi on 9:46 AM Rating: 5
Theme images by lucato. Powered by Blogger.